ایشیادنیاہندوستان

بیداری اسلامی عالمی اسمبلی کی ہندوستانی مسلمانوں کے خلاف وحشیانہ اقدامات کی مذمت

بیداری اسلامی عالمی اسمبلی اپنے بیان میں کہا ہے کہ بھارت کے نہتے ، مظلوم اور بے گناہ مسلمانوں کے خلاف ہونے والے بہیمانہ تشدد کے پیچھے صہیونیوں اورعالمی سامراجی طاقتوں کے ایجنٹوں کا ہاتھ نمایاں ہے ۔ بھارتی مسلمانوں کا ہندوستان کی ترقی، پیشرفت اور سالمیت میں اہم کردار رہا ہے اور وہ صدیوں سے ہندوؤں کے ساتھ پر امن اور صلح آمیز زندگی بسر کررہے ہیں۔ بھارتی ثقافت کو تباہ و برباد کرنے کے پیچھے ہندو انتہا پسند اور متعصب گروہوں کا ہاتھ ہے جن کے سر پر صہیوینوں کا ہاتھ ہے اور وہ ہندوستان کے بھائی چارہ کو نابود کرنے اور ہندوستان میں عدم استحکام پیدا کرنے کی تلاش و کوشش کررہے ہیں۔مہر کے مطابق بیداری اسلامی عالمی اسمبلی نے اپنے بیان میں ہندوستان میں مقیم 200 ملین مسلمانوں کے مقدسات کی بے حرمتی اور مسلمانوں کی تذلیل و توہین کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہندو انتہا پسندگروہوں کے وحشیانہ اقدامات جمہوریت کے منافی ہیں بھارتی مسلمانوں پر تشدد ایسے وقت کیا گیا جب امریکی صدر ٹرمپ بھارت کے دورے پر تھے اور ہندو انتہا پسندوں نےٹرمپ کو خوش کرنے کے لئے مسلمانوں پر وحشیانہ اقدامات کا ارتکاب کیا۔ مہر کے مطابق بیداری اسلامی عالمی اسمبلی نے بھارتی حکومت پر زوردیا ہے کہ وہ مسلمانوں کے خلاف ہونے والے بہیمانہ اور مجرمانہ اقدامات کی روک تھام کے سلسلے میں اپنی ذمہ د اریوں پر عمل کرے اور بھارتی حکومت کو آئندہ کسی بھی انتہا پسند ہندو گروہ کو ایسے اقدامات انجام دینے کی اجازت نہیں دینی چاہیےاور مسلم کش فسادات میں ملوث افراد کے خلاف بھارتی آئين کے مطابق کارروائی کرنی چاہیے۔ بیداری اسلامی عالمی اسمبلی نے بھارتی مسلمانوں کی بھر پور حمایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ بھارتی مسلمانوں کے حقوق کے تحفظ کے لئے کسی بھی اقدام سے گریز نہیں کرےگی۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button