یورپایراندنیافلسطینمشرق وسطی

جنرل قاآنی کا واضح بیان۔۔۔ صہیونی خوفزدہ

فلسطینیوں نے کیوں اسرائيل کی بے حد اہم تنصیبات کو جان بوجھ کر نشانہ نہیں بنایا ؟

جنرل قاآنی کا واضح بیان۔۔۔ صہیونی خوفزدہ

فلسطینیوں نے کیوں اسرائيل کی بے حد اہم تنصیبات کو جان بوجھ کر نشانہ نہیں بنایا ؟

جنرل قاآنی نے جو وجہ بتائی وہ دل خوش کرنے والی ہے

فارس نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق جنرل اسمعیل قاآنی نے ہفتے کی صبح سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی کے ڈپٹی کمانڈر جنرل محمد حجازی کی مجلس ترحیم سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فلسطین کے مظلوم عوام نے حاصرے اور پابندیوں کے باوجود جنگ کے ابتدائی تین روز کے دوران 22 روزجنگ کی نسبت دوگنے میزائیل فائر کئے، جس سے استقامتی محاذ کی طاقت کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔

جنرل قاآنی نے کہا کہ رہبر انقلاب اسلامی فرمایا تھا کہ فلسطینیوں اور استقامتی محاذ کے سپوتوں کو لیس کردیا جائے، اس کے معنی یہی ہیں کہ ان کو لیس کردیا گیا اور انہوں نے بھی بتا دیا کہ کس طرح سے جنگ کی جاتی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ صہیونی حکام نے اپنے ہم فکر ملکوں سے یہ درخواست کی تھی فلسطینی جوانوں سے کہہ دیں کہ اپنے حملے روک دیں، لیکن فلسطینوں نے اپنی شرائط منوائی اور صیہونی حکومت کی بالا دستی کو تسلیم نہیں کیا اور جنگ سے ہاتھ نہیں روکا۔

انہوں نے کہا کہ 3 ہزار راکٹ اور میزائیل جو مقبوضہ علاقوں پر فائر کئے گئے وہ اسی علاقے میں بنائے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مقبوضہ علاقوں میں صیہونی حکومت کی بنیادی تنصیبات فلسطینوں کے راکٹ حملوں کی رینج میں تھیں اور ان کو نشانہ بنایا جاسکتا تھا، لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا، اس لئے کہ اب زيادہ عرصہ نہیں لگے گا کہ فلسطینی خود ان تنصیبات سے استفادہ کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ فلسطین کو پورے خطے کا انتطام اپنے ہاتھ میں لینے اور صیہونی حکومت کو اس سرزمین سے نکلنے کی فکر کرنی چاہیے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

بھی چیک کریں
Close
Back to top button