دنیاامام خمینیایرانحزب اللہ حقویردیمثالی شخصیاتمشرق وسطی

استاد حلمی کوجا آسلان کے قلم سے طلوع آفتاب انقلاب اسلامی

استاد حلمی کوجا آسلان کے قلم سے طلوع آفتاب انقلاب اسلامی

استاد حلمی کوجا آسلان کے قلم سے

طلوع آفتاب انقلاب اسلامی

والفجر. قسم ہے فجر کی. قسم ہے اس آفتاب انقلاب اسلامی کی جس نے اس صدی کو اسلام سے منور کیا

شروع اللہ کے نام سے جو نہایت مہربان اور رحم والا ہے

 

پہلا حصہ:

سورہ الفجر ۱ـ۱۴ آیات ؛

۱) قسم ہے فجر کی ۲)اور دس راتوں کی ۳) اور جفت اور طاغ کی ۴) اور رات کی جب رخصت ہونے لگے ۵) کیا ان میں قسم ہے عقلمندوں نزدیک ۶) کیا نہیں دیکھا تم نے کہ کیا کیا تمہارے رب نے قوم عاد کے ساتھ ۷) ارم ( کہلاتے تھے) درازقدمنند ستونوں کے ۸) وہ کہ نہیں پیدا ہوے تھے ان جیسے تمام ملکوں میں ۹) اور ثمود (کے ساتھ کیا کیا) جو تراشتے تھے چٹانے وادی میں ۱۰) اور فرعون میخوں والے ( کے ساتھ کیا کیا) ۱۱) یہ لوگ سرکش ہو رہے تھے ملکوں میں ۱۲) پس کرتے تھے ان میں بہت سے فساد ۱۳) تو برسا دیا ان پر تمہارے رب نے کوڑا عذاب کا ۱۴) بیشک تمہارا رب گھات میں ہے

 

سورہ فجر کی اس صدی میں قرآن کے "دس دن (اور راتیں) فجر کے وقت” کے شاندار معجزے کی پیدائش کی طرف بڑھنے سے پہلے اس موضوع کے بارے میں ابتدائی معلومات (تعارف) کی ضرورت ہے۔ تاکہ بعض  امکانی شکوک و شبہات کی کوئی گنجائش نہ رہے! یعنی:

جیسا کہ معلوم ہے؛ قرآن پاک۔ -حشاء- اسے سادہ انسانی الفاظ اور کتابوں کی طرح نہ سمجھا جائے۔ سب سے پہلے تو اس بات کو قریب سے جان لینا چاہیے کہ وہ اللہ کا کلام، خطاب اور کتاب ہے، وہ علم الٰہی پر مشتمل ہے، اور یہ علم الٰہی انسانی فکر سے محیط نہیں ہو سکتا (1)۔ قرآن جو ازلی و ابدی کو ایک ‘نقطھ سمجھ کر ترنم کرتا  ہے، اس نے کبھی بھی کسی طبعی اوربشری  وجود و حادث   کو اپنے ‘الٰہی نقطہ نظز سے خارج نہیں کیا، اس کے برعکس ‘سب کچہ اس میں مشتمل وجامع  ہے۔اسی وجہ سے علماء کرام میں سے ایک صحابی جیسا کہ عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے کہا کہ قرآن میں ہر چیز کا علم نازل ہوا ہے اور ہر چیز کا اعلان کیا گیا ہے۔ جب آپ کہتے ہیں (۲)؛ عبداللہ ابن عباس رضی اللہ عنہما کی طرح وہ صحابہ جو قرآن کے مترجم ہیں! یہ کہہ کر کہ ”اگر میرے اونٹ کی ایک رسی گم ہو جائے تو میں شاید (یقیناً) اسے کتاب اللہ میں تلاش کروں!‘‘ (۳)، انہوں نے یہ کہہ کر قرآن کے لامتناہی علم اور لامتناہی محیط کی طرف توجہ مبذول کرائی۔

قرآن جو ہر لحاظ سے ایک ‘معجزھ ہے، خواہ اسلوب، بیان اور فصاحت کے لحاظ سے ہو، یا تصور، مواد، علم اور تذلیل کے لحاظ سے، اس میں ہر قسم کے علوم و حادث  موجود ہے۔ ہاں؛ غیب کی کنجیاں اس (اللہ) کے پاس ہیں۔ ان کے بارے میں کوئی اور نہیں جان سکے گا۔ وہ سب کچھ جانتا ہے جو خشکی اور سمندر میں ہے۔ اس کے علم کے بغیر کوئی پتا نہیں گرتا۔ زمین کی تاریکی میں سوائے ایک گیلے اور خشک (کچھ) کے، سب ایک ہی کتاب مبین (قرآن، جو علم الٰہی کا خزانہ ہے) میں موجود ہیں۔ (۴)؛ ”ہم نے اس کتاب (قرآن) میں کوئی کمی نہیں چھوڑی…‘‘ (۵) قرآن کریم کی آیات اس موضوع کو واضح طور پر بیان کرتی ہیں۔ وہ اس حقیقت کی طرف توجہ مبذول کراتے ہیں کہ قرآن ماضی اور مستقبل، ازلی اور ابدی، گیلی اور خشک (ہر چیز) کو گھیرے ہوئے ہے۔ جی ہاں؛ قرآن اس کتاب کبیر قائنات کا ایک ترجمائے ازلیہ ہے۔ اور آیات تقوینیہ کی تلاوت کرنے والا ایک ترجمان ابدی ہے۔۔اور اس کتاب عالم و غیب کا مفسر۔۔ اور زمین و آسمان کے غیبی آسما الٰہی کے خزانوں کا کشاف۔ اور ستور الحدیثات کے تحت،  مفتاحِ مزمرِ حق۔۔ اور عالم شہادت میں ، عالم غیب کی لسان۔۔ اور اس عالم شہادت کے پردے کے پیچھے عالم غیب کی جہت میں التفات ابدیہ رحمانیہ۔۔ اور خطاب ازلیہ و سبحانیہ کا خزانہ۔۔۔ اور اس عالم اسلام کا آفتاب و بنیاد۔۔ اور عوامل اہرویہ کا مقدس نقشہ۔۔ اور اس عالم انسانیت کا نور۔۔ اور نو بشر کا حکمت حقیقی۔۔ اور انسان کو سعادت پے لیجانے والا حقیقی مرشد و حدیث۔۔ اور انسان کے لیے ایک کتاب شریعت،اور کتاب دعا، اور ایک کتاب حکمت اور ایک کتاب عبادت، اور ایک کتاب ذکر اور ایک کتاب فکر اور تمام کتابوں کا مشتمل جامع کے ماند ایک کتاب مقدس ہے۔  ہاں؛ "قرآنِ مُو، جو ہر جگہ ایک ‘معجزہ’ ہے، بیرونی اور اندرونی (اندرونی، چمکدار) دونوں پہلوؤں پر مشتمل ہے (8)، ‘ظاہریون’ اور ‘بطینیون’ کی ‘زیادہ اور کم بیان’ لائنوں سے آزاد ہے۔ (9) ‘سز البیان’۔ جیسا کہ یہ لفظی طور پر ظاہر ہوتا ہے، اس کے واضح معنی کے ساتھ؛ یہاں تک کہ وہ اپنے اسلوب اور روح کے ساتھ بہت سارے معنی بیان کرتا ہے۔ ہر آیت میں معانی کی کئی تہیں ہیں۔ قرآن چونکہ علمِ ماحول سے آیا ہے اس لیے اس کے تمام معانی مراد لیے جا سکتے ہیں۔ یہ ایک یا دو معانی تک محدود نہیں ہے جیسے کہ کسی شخص کی جزوی فکری اور ذاتی مرضی کے الفاظ!…” (10)۔ کے لیے: ازلی اور ابدی کا رب، زمین اور آسمان، مادہ اور معنی، دنیا اور آخرت.. اور؛ ظاہر اور بطن؛ اللہ رب العزت جو ایک آفاقی اور آفاقی چیز ہے، کمزور انسانی ذہن، ادراک اور یادداشتوں کے ساتھ اس کے کلام الٰہی اور علم کو محیط اور محدود کرنا ممکن نہیں۔  اسی بناء پر قرآن کو جو کہ کلام اللہ ہے، کو ہر لحاظ سے ‘ معجزہ البَیْانَ’ کا لقب دیا گیا ہے، اور یہ  اہل (راسیحون) سے ثابت ہے۔ اس نقطہ نظر سے قرآن جو ہر لحاظ سے ایک ‘معجزہ ہے، اپنے ‘معلومات غیپ کے لحاظ سے ایک ‘معجزہ یادگار کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ وہ؛ عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہ کا "قرآن میں ہر چیز کا علم نازل ہوا ہے اور ہر چیز کا اعلان کر دیا گیا ہے۔” عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما نے یہ بھی کہا کہ اگر میرے اونٹ کی ایک رسی گم ہو جائے تو میں اسے کتاب اللہ میں تلاش کروں گا۔ کہ انہوں نے کہا، "ہر چیز گیلی اور خشک، ہر علم قرآن میں ہے۔ اس نے ابھی متعلقہ آیات درج کی ہیں (انعام: ۳۸،۵۹؛ لقمان:۲۷؛ کہف:۱۰۹)، جس میں کہا گیا ہے کہ "قرآن کا علم، جو اللہ کا کلام اور علم ہے” ۔ اس آشکار سچائی کے جواب میں، ‘راسیحون’ کے اسلامی علماء نے بعض اوقات غیب کے اشارے کے طور پر قرآن سے معجزات اخذ کیے اور انھیں تحریری ‘دستاویزات’ کے طور پر اگلی نسلوں کے لیے چھوڑ دیا۔ مثال کے طور پر:  ا) جب کہ مسلمان  مکہ میں ‘مشرکون کے زیر تسلط تھے، جاری ایران اہل روم (بازنطینی) جنگ میں، ‘ایراني، جو مکہ کے مشرکین کی طرح آسمانی کتاب کے مالک نہیں تھے، خوش تھے۔ ‘اہل کتاب کو اہل روم نے شکست دی اور کہا، دیکھو، تم بھی ہمارے سامنے ایسا ہی انجام دو گے!” سورہ ‘روم’ کی ابتداء مشرکین مکہ کے خلاف نازل ہوئی؛ اس کا اعلان اس طرح کیا گیا ہے: "ایرانیوں کو شکست ہوگی اور  اہل روم غالب ہوں گے”۔ الم۔ مغلوب ہو گئے اہلِ روم۔ نزدیک کے ملک میں،اور وہ اپنے مغلوب ہونے کے بعد عنقریب غالب آجائیں گے۔ فی بضع سنین(3-9) سالوں میں اللہ ہی کا ہے حکم پہلے بھی اور بعد میں بھی اور اس روز خوش ہوجا ئیں گے ایمان والے۔ اللہ کی مدد سے ۔ وہ مدد دیتا ہے جسے وہ چاہتا ہے اور وہی غالب ہے بڑا مہربان ہے ( سوری الروم:1-5) ۔ اس پر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے مشرکوں میں سے ایک، ابیی بن خلف سے ۱۰۰ اونٹوں کی  شرط لگائی، مذکورہ مدت (جنگ بدر کے دوران) مجوسی ایرانیوں پر اہل روم کی ‘یقینی فتخ پر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے ابیی بن خلف کے جانشینوں سے مذکورہ ۱۰۰ اونٹ  لے لیے۔ اور اس طرح  قرآن کا غیبی اخبار و الٰہی معجزہ وجود میں آیا  ۔  حدیبیہ کے امن کی وجہ سے غم زدہ مومنین کو طاقت، نصرت اور قوت عطا کرنے کے لیے  نازل  ہونے والی سورۃ الفتح  کہ جس میں بہت سی "فتوحات” کا ذکر اخبار غیبی کی شکل میں ہوا ۔ مثال کے طور پر جو لوگ یہ سمجھتے تھے کہ حدیبیہ میں امن ایک ‘ہار’ ہے، انہوں نے اس آیت کو رد کر دیا کہ "ہم نے یقیناً تمہارے لیے (حدیبیہ کے مشورے سے) فتح (فتح و فتح کا واضح راستہ) کھول دیا ہے۔” (فتح) :1-10)؛ انہوں نے کہا کہ حدیبیہ عظیم فتوحات کا آغاز اور دروازہ ہے اور یہ بالکل اسی طرح نکلا جیسا کہ انہوں نے کہا۔ اس کے بعد؛ "جب تم غنیمت لینے کے لیے خیبر جاتے ہو (اور فاتح ہو کر لوٹتے ہو)…” (الفتح:۱۵)؛ ”اللہ تعالیٰ نے تم سے اور بہت سی غنیمتوں کا وعدہ کیا ہے جو تمہیں حاصل ہوں گے، اس لیے اس نے یہ (خیبر کا مال) تمہیں پہلے ہی دے دیا ہے اور لوگوں کے ہاتھ تم سے واپس لے لیے ہیں۔‘‘  (سورہ الفتح۲۰) کی ان آیات میں فتح خیبر اور اس جیسی خوشخبری سنائی اور یہ سب اسی طرح ظاہر ہوئے۔ ”بے شک اللہ تعالیٰ نے تصدیق کر دی ہے کہ اس کے رسول کا خواب سچا ہے۔ انشاء اللہ، (تم سب) ضرور مسجد الحرام (فتح) میں داخل ہوں گے – حفاظت کے ساتھ، (تم میں سے کچھ) اپنے سر منڈواتے ہوئے، (تم میں سے کچھ) اپنے بال کٹواتے ہوئے، بغیر کسی خوف کے۔ لیکن (اللہ نے) وہ بات جان لی جو تم نہیں جانتے تھے اور اس سے پہلے قریبی فتح کروائی (اس نے فتح مکہ سے پہلے خیبر کی فتح کو اور اس کے بعد فتح مکہ کو تمہارے لیے موزوں قرار دیا)۔ "(الفتح: 28) جبکہ قرآن پاک کی آیت فتح مکہ اور خیبر کی کافی بشارت دیتی ہے، "وہی ہے جس نے اپنے نبی کو ہدایت اور سچا دین دے کر بھیجا ہے۔ (یہ) اس لیے ہے کہ اس (اسلام) کو تمام مذاہب پر غالب کر دے۔ اللہ گواہ کے طور پر کافی ہے (کہ آپ کو اس طرح بھیجا گیا ہے)! محمد اللہ کے رسول ہیں۔ اور جو اس کے ساتھ ہیں وہ کافروں پر سخت ہیں۔ (سورہ الفتح:۲۸ء۲۹) ان آیات میں؛ اسلام کا عالمی سطح پر غلبہ اور شاعر اعلان کرتا ہے کہ وہ تمام مذاہب اور نظریات پر حکومت کرے گا۔ یہ سب اس طرح  ابھر کر سامنے آئے ہیں اور آتے رہیں گے۔ یہ مکہ میں نازل ہوا، "یا وہ کہتے ہیں، "ہم ایک ایسی جماعت ہیں جو بدلہ لینے کی صلاحیت رکھتے ہیں؟ عنقریب وہ (کافر) جماعت شکست کھا جائے گی اور پیٹھ پھیر کر بھاگ جائیں گے۔(قمر: ۴۴ء۴۵) قرآن پاک کی آیات ‘بدر کی فتح کا اعلان کرتی ہیں (۱۴)؛ "جب اللہ نے تم سے وعدہ کیا تھا کہ دو گروہوں میں سے ایک ضرور تمہارا ہو گا…” (انفال:۷) آیت اسی فتح (بدیری) کی تصدیق کرتی ہے اور مومنوں کے دلوں کو "شاندار” بناتی ہے ۔”جب اللہ کی رحمت اور فتح آئے گی، جب تم دیکھو گے کہ لوگ فوراً اللہ کے دین میں داخل ہو جائیں گے۔ آیات (نصر: ۱ء۲) یہ بھی بتاتی ہیں کہ مختلف ممالک فتح کیے جائیں گے اور تمام قبائل کے لوگ لہروں کے ساتھ اسلام میں شامل ہوں گے۔ اور ایسا ہی ہوا۔ "اللہ نے تم میں سے جو لوگ ایمان لائے اور نیک عمل کیے ان سے وعدہ کیا ہے کہ وہ انہیں زمین پر جانشین بنائے گا جس طرح اس نے ان سے پہلے لوگوں کو بنایا تھا، اور ان کے لیے اس نے دین (اسلام)کو  پسند کیا ۔” اور ان کے خوف کو سلامتی میں بدل دے گا۔‘‘ (نور) :۵۵) اس کی آیت پے درپے اسلامی فتوحات اور فتوحات کے بارے میں بھی آگاہ کرتی ہے اور مومنین کو مزید مقاصد کی طرف رہنمائی کرنے کے مقصد سے بشارت دیتی ہے۔ ’’ان (کافروں) کے لیے دنیا میں ’ہزی‘ (ذلت و رسوائی) ہے۔ اور آخرت میں ان کے لیے سب سے بڑا عذاب ہوگا۔ آیت (بقرہ: ۱۱۴) میں حزی کے معنی کو مفسرین مثلاً ابن جرير، الكشّاف اور السدّي نے استنبول کی فتح قرار دیا تھا (۱۸) اور صدیوں بعد، یہ ‘غیب کی اطلاغ لے لی۔  اور بعد میں استنبول فتح ہو گیا۔ اس کے علاوہ؛ ابن برّجان کہلانے والے شخص نے کہا، "الم غلبت الروم…” (رم: ۱ء۵) نے ‘عام’ آیات سے غیب کے بارے میں ایک خاص ‘معلوماث نکالی ہیں۔ اس نے کہا، "یہ آیات بتاتی ہیں کہ ۵۸۳ ہجری میں ‘یروشلم’ دوبارہ فتح کیا جائے گا”، سال اور تاریخ بتاتے ہوئے۔ (۱۹) اگرچہ ابن برّجان ۵۳۶ ہجری میں فوت ہوا، اس کے ٹھیک ۴۷ سال بعد، یروشلم کا شہر درحقیقت سال ۵۸۳ میں صلاح الدین نے فتح کیا، جس کا اعلان کیا گیا، اور اس طرح  قرآن کی ایک اور غیبی اخبار وجود میں آئی۔    آخری صدی کے عظیم مجدد اسلام استاد بدیع الزمان سعید نورسی نے بھی سورہ الفتح 27 ویں 28 ویں 29 ویں سے فتح مکہ و خیبر کے ساتھ ساتھ اور بھی اخبار غیبی کا بھی استخراج کیا ۔ "اللہ و اس کے رسول کی اطاعت کرنے والے ، وہ لوگ ہیں ؛ کہ جن کو اللہ نے نعمت دی، انبیاء و صادقین و صالحین کے ساتھ۔وہ کتنے شاندار دوست ہیں (نسا: 69) آیت کریمہ سے  خلفاء عربی کے ساتھ امام حسن رضہ اللّٰہ عنہ کی کیفیت حال اور 30 سال خلافت جو کہ حدیث سے ثابت ہے۔آلوسی جیسے ایک تحقیقی مفسر کہہ تے ہیں کہ؛ بہت سے اہل علم و عرفان نے قرآن سے ‘مغائبات’ استخراج کر کے نکالا اور بہت سی علماء کی رائے یہ ہے کہ ؛ کوئی ایسا حادثہ نہیں ہے کہ جس کا قرآن میں علم الجفر کی صورت میں ذکر نہ کیا گیا ہو۔ بس یہ کہ یہ علامتیں اہل علم کی ترف سے حل کی جا سکتی ہیں۔ اور دیگر بہت سے علماء و مفسر کی بھی یہی رائے ہے۔ لہذا تاریخ میں وقوع پذیر ہونے والے حادثات اس بات کی نشاندھی کرتے ہیں۔ اور اس کی مخالفوں کی کوئی علمی اور پختہ دلیل بھی موجود نہیں ہے۔اس صورت میں قرآن کے ظاہری معانی کے علاوہ اشعری ، رمزی و غیبی جیسے معانی بھی ہیں۔ اور ان کو صرف اہل علم سمجھ سکتے ہیں۔ اور اگر قرآن کا صرف ظاہری معنی ہی لیا جائے تو اس کی اہمیت کم ہے۔ جی ہاں جب ہم اس کتاب اللّٰہ کو اس قدسی ہثیت و خصوصیت ( ازل سے ابد تک ہر حادثات کو اپنی محیط میں رکھنا) سے دیکھے تو اس 20 ویں صدی کہ تاریخ میں بہت کم پانے والی اس دجّالی و جاہل و تاغوتی جیسی صدی کے اندر ایران میں وقوع پذیر ہونے والا عظیم الشان اسلامی انقلاب کے جو حقیقی محمدی( صلی اللہ علیہ وسلم ) اسلام کے تمام خصوصیات کے حامل ہے تو یہ لازم ہے کہ اس اسلامی انقلاب کا بھی قرآن میں غیبی اخبار و علامتیں موجود ہوں گی اور یقیناً ایسا ہی ہے۔

 

 

 

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button